203

دانت صاف دل محفوظ

جنوبی کوریا میں ڈیڑھ لاکھ سے زیادہ لوگوں پر تقریباً 12 سال تک چلنے والے ایک مطالعے میں ظاہر ہوا ہے کہ وہ لوگ جو دن میں تین یا تین سے زیادہ بار اپنے دانت صاف کرتے ہیں، انہیں دل کی دھڑکنیں بے قابو ہونے اور دل کے دورے کا خطرہ بھی بہت کم ہوتا ہے

یہ مطالعہ 40 سے 79 برس تک کے ایسے لوگوں پر کیا گیا جنہیں دل کی دھڑکنیں بے قابو ہونے یا دل کے دورے کی کبھی کوئی شکایت نہ ہوئی تھی۔ ان افراد کی تعداد 161,286 تھی جنہیں اس مطالعے کی غرض سے رضاکار شامل کیا گیا۔

ان میں سے ہر رضاکار کو آنے والے ساڑھے دس سال کے دوران باقاعدہ طور پر مشاہدے میں رکھا گیا جس میں ان کے رہن سہن کے انداز، وزن، بیماریوں اور منہ صاف رکھنے سے متعلق ان کی عمومی عادات پر خاص نظر رکھی گئیں۔

مطالعے کے آخر پر معلوم ہوا کہ وہ رضاکار جنہوں نے روزانہ تین یا زیادہ بار اپنے دانت صاف کیے تھے، ان میں دل کی دھڑکنیں بے قابو ہونے کا امکان 10 فیصد، جبکہ دل کے دورے کا امکان 12 فیصد کم ہوگیا۔ ایسا کیوں ہوا؟ ابھی اس بارے میں کچھ نہیں معلوم اندازہ ہے کہ منہ میں پائے جانے والے مضر جراثیم (بیکٹیریا) بار بار دانت صاف کرنے کی وجہ سے اپنی پرورش نہیں پاتے۔ بصورتِ دیگر منہ میں ان کی تعداد بہت بڑھ جاتی ہے اور وہ پیٹ میں پہنچ کر دورانِ خون میں شامل ہوجاتے ہیں؛ اور خون کی رگوں سے لے کر دل تک کےلیے نقصان دہ ثابت ہوتے ہیں۔

کیٹاگری میں : صحت

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں